قرآن مجید ایک زندہ معجزہ


اللہ رب العزت نے جتنے بھی پیغمبراس سرزمین پر مبعوث فرمائے ان سب کو مختلف معجزات عطاکیے تاکہ عقل وہوش رکھنے والے اُن کی نبوت کی حقانیت و صداقت پر ایمان لے آئیں ،مثلاً حضرت موسیٰ   کے دور میں جادو کا بڑا زور تھا فرعون کے حکم پر بڑے بڑے جادوگر جب فرعون کے دربار میں جادو کے مقابلے میں شریک ہوئے اور موسیٰ   نے ان سب کے جادو کو شکست فاش دے دی تو وہ سمجھ گئے کہ یہ جادو نہیں بلکہ اللہ کی طاقت ہے، چنانچہ وہ بے ساختہ پکار اُٹھے:

(قَالُوْا اٰمَنَّابِرَبِّ الْعٰلَمِیْنَ ۔ رَبِّ مُوْسٰی وَھٰرُوْنَ)

'' کہنے لگے ہم رب العالمین پرایمان لے آئے،جو موسٰی اور ہارون کا پروردگارہے ''  [1]

اسی طرح حضرت عیسیٰ کے زمانے میں طب کا بڑا زور تھا چنانچہ اسی مناسبت سے اللہ تعالیٰ نے عیسیٰ کو وہ معجزات دیے کہ دنیائے طب حیر ان وپریشان ہوکر رہ گئی۔ آپ نے اللہ کریم کے حکم سے لا علاج مریضوں کو شفا یاب کیا 'مردوں کو زندہ کیا'مادر زاد اندھوں اور کوڑھ کے مرض میں مبتلامریضوں کوتندرست کیا ،تاہم یہ حقیقت ہے کہ آج ان میں سے کوئیے کہ:
بھی معجزہ باقی نہیں جس کو آج کا انسان پرکھ سکے۔ یہ معجزات ان انبیاء کرام کی وفات کے ساتھ ہی ختم ہوگئے اور ان کا ذکر ہمیں صرف آسمانی صحائف یا تاریخی کتابوں میں ہی ملتا ہے، اس حوالے سے اللہ تعالیٰ نے اپنے آخری رسول حضر ت محمد صلی اللہ علیہ وسلمکو  قرآن مجید کی صورت میں جو معجزہ عطا کیا تھا وہ 1400 سال گزرجانے کے بعدبھی نہ صرف اپنی اصلی حالت میں موجود ہے بلکہ آج کے جدید سائنسی دور میں بھی اپنا لوہا منوا رہا ہے۔ قرآن مجید جس دور میں نازل ہوا وہ فصاحت و بلاغت اورمنطق و حکمت کا دور تھا چنانچہ جب اسے فصیح وبلیغ ادبیوں ' عالموں اور شاعروں کے سامنے پیش کیا گیا تو وہ بے ساختہ پکا ر اُٹھ

'' خدا کی قسم یہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا کلام نہیں ہے '' [2]

قرآن مجید ایسی فصیح وبلیغ زبان میں نازل ہواجس کی نظیر پیش کرنے سے انسان قاصر تھے،قاصر ہیں اور قاصر رہیں گے!مثلاًقرآن مجید نے جب اپنی فصاحت وبلاغت کا دعویٰ کیا تو عربوں نے انتہائی غورفکر کے بعد تین الفاظ پر اعتراض  کیا کہ وہ عربی محاورے کے خلاف ہیں۔یہ الفاظ کُبَّار،ہُذُوًااور عُجَاب تھے۔معاملہ نبی اکرم  صلی اللہ علیہ وسلم  کے سامنے پیش ہوا۔آپ نے معترضین کے مشورے سے ایک بوڑھے شخص کو منصف بنایا۔جبب وہ شخص آیا اور بیٹھنے لگا توآپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا :'' ادھر بیٹھ جائیں ''۔وہ اس طرف بیٹھنے لگا تو آپ نے فرمایا :'' اُدھر بیٹھ جائیں''۔جب وہ اُدھر بیٹھنے لگا تو پھر اشارہ کرکے فرمایا :''اِدھر بیٹھ جائیں ''۔اس پر اس شخص کو غصہ آگیا اور اس نے کہا :

(( أَنَا شَیْخ کُبَّار أَتَتَّخِذُنِی ھُذُوًا ھٰذَا شَیئ عُجَاب ))

'' میں نہایت بوڑھا ہوں ۔کیا آپ مجھ سے ٹھٹھا کرتے ہیں؟یہ بڑی عجیب بات ہے ''۔

 یوں اس نے تینوں الفاظ تین جملوں میں کہہ ڈالے۔اس پر معترضین اپنا سامنہ لے کر رہ گئے۔

ایک اور واقعہ ملاحظہ فرمایں:

مصری عالم علامہ طنطاوی لکھتے ہیں کہ وہ ایک مجلس میں اپنے جرمن مستشرق دوستوں کے ساتھ بیٹھے تھے ۔مستشرقین نےان سے پوچھا :کیا آپ یہ سمجھتے ہیں کہ قرآن جیسی فصیح وبلیغ عربی میں کبھی کسی نے گفتگو کی ہے نہ کوئی ایسی زبان لکھ سکا ہے ۔علامہ طنطاوی نے کہا :''ہاں میرا ایمان ہے کہ قرآن جیسی فصیح و بلیغ عربی میں کسی نے کبھی گفتگو کی ہے نہ ایسی زبان لکھی ہے''۔انھوں نے مثال مانگی تو علامہ نے ایک جملہ دیا کہ اس کا عربی میں ترجمہ کریں:

''جہنم بہت وسیع ہے ''

جرمن مستشرقین سب عربی کے فاضل تھے ،انہوں نے بہت زور مارا۔جہنم واسعة ،جہنم وسیعة جیسے جملے بنائے مگر بات نہ بنی اورعاجز آگئے تو علامہ طنطاوی نے کہا : ''لو اب سنو قرآن کیا کہتاہے'':

(( یَوْمَ نَقُوْلُ لِجَھَنَّمَ ھَلِ امْتَلَاْتِ وَتَقُوْلُ ھَلْ مِنْ مَّذِیْدٍ))

'' جس دن ہم دوزخ سے کہیں گے : کیا تو بھر گئی ؟ اوروہ کہے گی :کیا کچھ اور بھی ہے ؟''  [3]

اس پر جرمن مستشرقین اپنی نشستوں سے اٹھ کھڑے ہوے اور قرآن کے اعجاز بیان پر مارے حیرت کے اپنی چھاتیاں  پیٹنے لگے۔ [4]

قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے اہل کتاب اورمشرکین کو قرآن کا مثل لانے کا چیلنج دیا تھا،پھر یہ چیلنج دس سورتوں تک محدود کردیا گیا ، حتٰی کہ صرف ایک ہی سورت کا مثل لانے کا چیلنج دے دیا گیا مگرنزول قرآن کے آغاز سے لے کر چودہ صدیاں گزر گئی ہیں مگر کوئی شخص قرآن مجید کی سی ایک صورت بھی تخلیق نہیں کرسکا جس میں کلام الٰہی کا سا حسن ،بلاغت ،شان ،حکیمانہ قوانین ،صحیح معلومات ،سچی پیشگوئیاں اور دیگر کامل خصوصیات ہوں۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ قرآن کریم کی  چھوٹی سے چھوٹی سورت ''الکوثر''ہے جس میں فقط دس الفاظ ہیں مگر کوئی اس وقت اس چیلنج کاجواب دے سکا نہ بعد میں۔

بعض کفار عرب جو نبی  صلی اللہ علیہ وسلم  کے دشمن تھے ،انہوں نے اس چیلنج کا جواب دینے کی کوشش کی تاکہ یہ ثابت کرسکیں کہ محمد  صلی اللہ علیہ وسلم جھوٹے ہیں(نعوذباللہ)مگر وہ ایسا کرنے میں ناکام رہے۔ان میں ایک مسیلمہ کذاب بھی تھا جس نے محمد  صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مبارکہ کے آخری دنوںمیں نبوت کا جھوٹا دعویٰ کیا ۔اس نے قرآن مجید کی بعض سورتوںکی نقل کرنے کی بھونڈی کوشش کی ،مثلاً:

(( اَلْفِیْلُ، وَمَا الْفِیْلُ ،وَمَا أَدْرٰکَ مَاالْفَیْلُ،لَہُ ذَنَب دَبِیلوَّ خُرْطُوْم طَوِیْل))

'' ہاتھی ہے،اور ہاتھی کیاہے،اور تم کیاسمجھے کہ ہاتھی کیاہے۔اس کی ایک موٹی دم ہے اورلمبی سونڈ ہے''۔

مسیلمہ نے ترنم کی خوش آہنگی میں لاجواب اور حکمت ومعانی سے بھرپور سورة العادیات کی طرز میں بھی فضول طبع آزمائی کی اور ''مینڈکی ''پر چند بے معنی فافیہ دار جملے بھی گھڑے مگر ''چہ نسبت خاک راباعالم پاک !'' وہ سراسر احمقانہ کلام تھا جو اس نام نہاد پیغمبر پر شیطان نے نازل کیاتھا ۔خلافت صدیقی میں مسیلمہ کذاب اپنے جھوٹے کلام اور باطل اعمال کے ساتھ مسلمانوں کے ہاتھوں قتل ہو کر جہنم کا ایندھن بن گیا ۔

عبداللہ بن مقفّع عربی کا ایک بڑا فصیح وبلیغ ادیب تھا ۔اس نے جب قرآن کا چیلنج پڑھاتو اس کے ہم پلہ کوئی ادبی کاوش پیش کرنے کی سوچی ۔اس نے بہت مغز ماری کی لیکن جب سرراہ ایک بچے کے منہ سے یہ آیت سنی :

(وَقِیْل یٰاَرْضُ ابْلَعِیْ مَآءَ کِ وَیٰسَمَآءُ اَقْلِعِیْ)

'' اور کہا گیا : اے زمین !اپنا پانی نگل جا اور اے آسمان !تھم جا''  [5]

تو وہ پکار اٹھا :

''میں گواہی دیتا ہوں کہ یہ کلام الٰہی ہے اورا س کی نظیر پیش کر نا ممکن ہی نہیں ''[6]

چناچہ یہ کفار کی بدبختی تھی کہ یہ سب کچھ جاننے کے باوجود  وہ اپنی ضد اور مادی فوائد کے لالچ میں اسلام کی دولت سے محروم رہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلمچونکہ اللہ تعالیٰ کے آخری نبی تھے جن کی نبوت قیامت تک قائم رہے گی ' چنانچہ ان کو معجزہ بھی ایسا دیا گیا جو قیامت تک رہے گا اور اس کو نہ صرف آج بلکہ قیامت تک ہر دور میں پرکھا جا سکتا ہے۔ یہ حقیقت ہے کہ جوں جوں زمانے نے ترقی کی ہے ویسے ہی قرآن مجید کی حقانیت واضح ہوتی چلی گئی ہے، تمام مفسرین نے اپنے اپنے زمانے کے علم اور ترقی کے اعتبار سے قرآن مجید کو سمجھااور اس کی تفسیر لکھی کیونکہ علم اللہ تعالیٰ کی دین ہے وہ انسان کو جس قدر چاہتاہے کسی چیز کے بارے میں علم عطافرماتا ہے'جیسے کہ فرمان باری تعالیٰ ہے:

( وَلاَیُحِیطُوْنَ بِشَیْئٍ مِّنْ عِلْمِہ اِلَّابِمَا شَآءَ )

'' وہ اس کی معلومات میں سے کسی چیز پر دسترس حاصل نہیں کر سکتے ہا ں جس قدر وہ چاہتا ہے (اسی قدر معلومکرا دیتاہے )''[7]

 سابقہ مفسرین کی تفسیر اور موجودہ جدید سائنس کی تحقیق سے نبی کریم  صلی اللہ علیہ وسلم   کاوہ فرمان یا د آجاتاہے جوترمذی اور دارمی میں موجود ہے اور اس کو مولانا منظور نعمانی نے معارف الحدیث میں نقل کیا ہے ۔یہ ایک لمبی حدیث ہے جس کا ایک ٹکڑا میں یہاں نقل کررہاہوں جبکہ بریکٹ میں تشریح مولانا منظور نعمانی ہی کی ہے ۔نبی کریم  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا:

''قرآ ن ہی حبل اللہ المتین یعنی اللہ سے تعلق کا مضبوط وسیلہ ہے اور محکم نصیحت نامہ ہے اور وہی صراط مستقیم ہے ۔وہی وہ حق مبین ہے جس کے اتباع سے خیالات کجی سے محفوظ رہتے ہیں اور زبانیں اس کو گڑبڑ نہیں کرسکتیں(یعنی جس طرح اگلی کتابوں میں زبانوں کی راہ سے تحریف داخل ہوگئی اور محرفین نے کچھ کا کچھ پڑھ کے اس کو محرف کردیا اس طرح قرآن میں کوئی تحریف نہیں ہو سکے گی ،اللہ تعالیٰ نے تا قیامت اس کے محفوظ رہنے کا انتظام فرمادیاہے )اور علم والے کبھی اس کے علم سے سیر نہیں ہوں گے (یعنی قرآن میں تدبر کا عمل اور حقائق ومعارف کی تلاش کا سلسلہ ہمیشہ ہمیشہ جاری رہے گا اور کبھی ایسا وقت نہیں آئے گا کہ قرآن کا علم حاصل کرنے والے محسوس کریں کہ ہم نے علم قرآن پر پور ا عبور حاصل کر لیاہے اور اب ہمارے حاصل کرنے کے لیے کچھ باقی نہیں رہا بلکہ قرآن کے طالبین علم کا حال ہمیشہ یہ رہے گا کہ وہ علم قرآن میں جتنے آگے بڑھتے رہیں گے اتنی ہی ان کی طلب ترقی کرتی رہے گی اور ان کااحساس یہ ہوگا کہ جو کچھ ہم نے حاصل کیاہے وہ اس کے مقابلہ میں کچھ بھی نہیں جو ابھی ہم کو حاصل نہیں ہو ا ہے )اور وہ قرآن کثرت مَزَاوَلَتْ سے کبھی پر انا نہیں ہو گا (یعنی جس طرح دنیا کی دوسری کتابوں کا حال ہے کہ باربار پڑھنے کے بعد ان کے پڑھنے میں آدمی کو لطف نہیں آتا ،قرآن مجید کا معاملہ اس کے بالکل برعکس ہے وہ جتنا پڑھا جائے گا اورجتنا اس میں تفکر وتدبر کیا جائے گا اتناہی اس کے لطف ولذت میں اضافہ ہوگا)او را س کے عجائب (یعنی اس کے دقیق ولطیف حقائق ومعارف)کبھی ختم نہیں ہوں گے۔[8]

بے شک قرآن سائنس کی کتاب نہیں ہے ،مگر کئی سائنسی حقائق جو اس کی آیا ت میں بعض مقامات پر انتہائی جامع اور کہیں اشارةً بیان کیے گئے ہیں صر ف بیسویں صدی کی ٹیکنالوجی اور سائنسی علوم کے فروغ کی مدد ہی سے ان کا مفہوم (کسی حد تک) واضح ہو سکا ہے۔ قرا ن حکیم کے نزول کے وقت ان کے اصل معانی متعین کرنا ناممکن تھا'یہ مزید ایک ثبوت ہے کہ قرآن خدا کا کلام ہے۔ قرآن حکیم کو بطورایک سائنسی معجزہ 'سمجھنے کے لیے ہمیں نزول ِ قرآن کے وقت کی سائنسی حالت پر نگاہ ڈالنی ہو گی۔

ساتویں صدی عیسوی میں جب قرآن کا نزول ہوا ،عرب معاشرے میں سائنسی معلومات کے حوالے سے بہت سارے توہماتی اور بے بنیاد خیالات رائج تھے۔ٹیکنالوجی اتنی ترقی یافتہ نہیں تھی کہ یہ لوگ کائنات اور قدرت کے اسرار کو پرکھ سکیں لہٰذا عرب اپنے آباؤاجداد سے وراثت میں ملے قصے کہانیوں پر یقین رکھتے تھے۔ مثال کے طور پر ان کا خیال تھا کہ زمین ہموار ہے اور اس کے دونوں کناروں پر اونچے پہاڑ واقع ہیں۔ یہ خیال کیا جاتا تھا کہ یہ پہاڑ ایسے ستون ہیں جنھوں نے آسمان کے قبے یا گنبد کو تھا ما ہو ا ہے۔قرآن کے نزول کے ساتھ ہی عرب معاشرے کے ان تما م توہماتی خیالات کا قلع قمع ہو گیا۔

 سورة الر عد کی آیت 2میں کہا گیا:

(  اَللّٰہُ الَّذِیْ رَفَعَ السَّمٰوٰتِ بِغَِیْرَعَمَدٍ تَرَوْنَھَا… )

''اللہ وہی تو ہے جس نے ستونوں کے بغیر آسمان جیسا کہ تم دیکھتے ہو (اتنے)اُونچے بنائے....''[9]

اس آیت نے اس خیال کی نفی کر دی کہ آسمان پہاڑوں کی وجہ سے بلند ی پر قائم ہیں۔  قرآن اس وقت نازل ہوا جب لوگ فلکیا ت (Astronomy)طبیعیات (Physics)یا حیاتیات (Biology)کے متعلق بہت کم جانتے تھے۔ یہ وہ مضامین ہیں جن سے کائنات  کی تخلیق ،انسان کی تخلیق،فضا کی ساخت ،زمین پر زندگی کو ممکن بنانے والے نازک تناسب جیسے موضوعات کے بارے میں بنیادی معلومات ملتی ہیں۔[10]

انسان کے لیے کائنات اورزندگی کی تخلیق کے بارے میں صحیح معلومات کا واحد ذریعہ ''مذہب '' ہے تاہم جب ہم مذہب کا لفظ استعمال کرتے ہیں اس وقت ہمارااشارہ قرآن مجید کی طرف ہوتا ہے جو صحیح ترین ماخذِ علم ِکائنات وانسان ہے۔دیگر مذاہب کی آسمانی کتب اب وہ حیثیت نہیں رکھتیں جو انہیں اپنے زمانۂ  نزول میں حاصل تھیں۔ کیونکہ ان میں تحریف کردی گئی ہے۔اور اس بات کی بھی خبر اللہ تعالیٰ نے اپنے ''فرقان حمید ''میں دے دی ہے جس کی تصدیق آج سائنس نے بھی کردی ہے کیونکہ بائبل جو توریت اور انجیل کا مجموعہ ہے' میں بیان کی گئی کئی باتیں سائنس کی رُوسے غلط ثابت ہوچکی ہیں۔ اس لیے یہ بات بھی قرآن مجید کی حقانیت پر دلالت کرتی ہے۔

انجیل وتوریت کے برعکس قرآن مجید یقینی طورپر کلام اللہ ہے اور ہر قسم کے تضاد سے بالکل منزہ و مبّرا ہے۔اللہ نے یہ کتاب خالصتاًاپنے بندوں کی ہدایت کے لیے اتاری ہے اور رہتی دنیا تک اس کی حفاظت کی ذمہ دار بھی خود اسی کی ذات  ہے۔ چناچہ

سورةالحجرمیں ارشادہوتاہے

(اِنَّا نَحْنُ نَزَّلْنَا الذِّکْرَ وَاِنِّا لَہ لَحٰفِظُوْن)

''یہ ذکر(یعنی قرآن مجید) ہم نے اتارا ہے اور ہم خود اس کے نگہبان ہیں''۔[11]

اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے کہ قرآن اس کی آخری وحی ہے'اس لیے اس کی حفاظت کا اس نے خود ذمہ لیا ہے لہٰذا سائنس کی تیز رفتار اور انسانیت کے لیے منفعت بخش ترقی اسی وقت ممکن ہے جب وہ قرآن سے رہنمائی حاصل کرے اورخالق ِکائنات کے بتائے ہوئے راستے پر گامزن رہے۔ اگر اس راستے کی الٹی سمت پر چلنے کی کوشش کی گئی تو سائنس دان وقت اور وسائل دونوں کو برباد کرنے کے مرتکب ہو ں گے۔

جس طرح دنیا کے دوسرے شعبوں میں ترقی وبہتری کے لیے ہم ایک صحیح سمت میں آگے بڑھتے اور منصوبے بناتے ہیں اور ان کے بارے میں بھی ہمیں قرآن سے رہنمائی ملتی ہے ویسے ہی سائنس کے شعبے کے لیے بھی صحیح راہ وہی ہے جسے رب العالمین اور احکم الحاکمین نے صحیح کہا ہے۔ اور قرآن مجید میں اس سمت کا تعین کر دیاگیا ہے جیسا کہ سورة بنی اسرائیل میں فرمایاگیا ہے:

(اِنَّّ ہٰذَا الْقُرْآنَ یَھْدِیْ لِلَّتِیْ ھِیَ اَقْوَمُ)

''حقیقت یہ ہے کہ قرآ ن وہ راہ دکھاتا ہے جو بالکل سید ھی ہے ''۔[12]

 امید ہے کہ اس کتاب کو پڑھنے کے بعدعوام الناس کو ا س حقیقت کا ادراک ہو جائے گا کہ قرآن مجید واقعتا اللہ تعالیٰ کا ہی کلام ہے، یہ کسی انسان کی بات نہیں تھی کہ وہ کائنات کے اُن اسرارو رموز کو 1400سال پہلے ٹھیک ٹھیک ویسے ہی بیان کر دے جیسے جدید سائنس  نے اس کے نزول کے بعد دریافت کیے ہیں۔ قرآن مجید کا یہ اعجاز باورکراتا ہے کہ یہ ہرزمانے کے لیے مشعل راہ ہے۔





[1] الاعراف، 7:121-122

[2] بحوالہ تفسیر ابن کثیر ، سورہ مدثر 

 [3] ق،  30:50

[4] اسلام کی سچائی اور سائنس کے اعترافات۔ ص 138-141

[5] (ہود 44:11 )

[6] اسلام کی سچائی اور سائنس کے اعترافات۔ ص 135-137

[7] البقرہ،2-255

[8] (معارف الحدیث ،جلد پنجم ۔صفحہ 68-70)
[9] الرعد۔  13:02
[10] معجزات قرآنی ،صفحہ9-10

[11] الحجر۔  15:9

[12] بنی اسرائیل۔  17:09

Share To:

tariq iqbal

Post A Comment:

1 comments so far,Add yours

  1. ندیم احمد یار خان4 دسمبر، 2011 12:00 PM

    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
    برادرم طارق اقبال صاحب!
    ماشاء اللہ اچھا اضافہ ہے۔

    جواب دیںحذف کریں